169

کھیل کھیل میں‌ تعلیم زیادہ سود مند؟

برطانیہ کے جنرل ڈی وک آف ولنگٹن سے کسی نے استفسار کیا کہ آپ نے واٹرلو کے مقام پر نپولین بونا پارٹ جیسے عظیم اور کامیاب جنگجو کو کیسے شکست دی؟ یہ جنگی حربے آپ نے کہاں سے سیکھے؟ تو ان کا جواب تھا کہ میں نے یہ تما م حربے انگلستان کے سکول ایٹن کے کرکٹ گراؤنڈ سے سیکھے ہیں۔ ایک مضبوط حریف کا ڈٹ کر مقابلہ کیسے کرنا ہے اور مشکل ترین حالات میں بھی کیسے ہمت نہیں ہارنی؟ دنیا بھر کے بہت سے ایسے سٹار موجود ہیں جنہوں نے کھیل کے حقیقی فلسفے کو سمجھتے ہوئے کامیابیاں سمیٹی ہیں۔ خود عمران خان صاحب بھی کرکٹ کے میدان سے ہی وزیراعظم کے اعلیٰ منصب تک پہنچے ہیں۔ یہ سب اسی صورت ممکن ہے جب تعلیمی ادارے طلبہ کو تعلیم کے ساتھ مختلف کھیلوں کے مواقع بھی فراہم کریں۔

طلبہ کے لیے کھیلوں کی اہمیت کے پیش نظر ثانوی سطح پر باقاعدہ جسمانی صحت کی تعلیم دی جاتی ہے مگر سکول لیول میں ہمارے اکثر والدین اور خود اساتذہ بھی امتحان میں بہترین نتائج کے لیے طلبہ کی نصابی سرگرمیوں پر زور دیتے ہیں۔انہیں محض نصاب ختم کرانے کی فکر لگی رہتی ہے اور کھیل کود کو وقت کا ضیاع سمجھ کر یکسر مسترد کر دیتے ہیں۔ افلاطون کا کہنا ہے کہ بچے کھیل پیدائشی طور پر ورثے میں لے کر آتے ہیں لہٰذا یہ کہنا بےجا نہ ہو گا کہ کھیل کے میدان اور کمرہ جماعت کو یکساں اہمیت حاصل ہے۔ اگر طلبہ کو سکول کی چار دیواری اور محض کلاس تک محدود رکھ کر ان کو نصاب پڑھایا جائے تو وہ صرف کتابی کیڑے ہوں گے۔ باہر کی دنیا سے ان کا ربط ٹوٹ جائے گا۔ مسلسل گھر میں رہنا بچوں کے ذہن کو محدود کرتا ہے اور وہ عملی زندگی می کوئی خاطر خوا ہ کامیابی حاصل نہیں کر پائیں گے لہٰذا تعلیم کو کتابوں تک محدود نہیں ہونا چاہیے۔

آج دیکھا جا سکتا ہے کہ ٹیکنالوجی کے بڑھتے ہوئے رجحان کی وجہ سے طلبہ کو گھر سے باہر کھیل کود کے کم مواقع مل رہے ہیں اور گلی کوچوں میں بھی کھیلنے کا رواج معدوم ہوتا جا رہا ہے کیونکہ اکثر والدین باہر کے ماحول کو بچوں کے لیے غیر محفوظ سمجھتے ہیں۔اسی لیے بچے اپنا بیشتر وقت موبائل فون، لیپ ٹاپ اور ویڈیو گیمز میں گزارتے ہیں یا ٹی وی سکرین پر کارٹونز کی مصنوعی دنیا میں مگن رہتے ہیں۔ اسی وجہ سے بچوں کی قدرتی ماحول سے وابستگی کم ہوتی جا رہی ہے۔ انہیں فطرت کو قریب سے دیکھنے کے کم مواقع ملتے ہیں۔ ان کی زندگی روبوٹ کی صورت ا ختیار کر چکی ہے اور وہ مشین کی طرح کام کرنے لگتے ہیں۔ اسی لیے تو علامہ اقبال نے فرمایا تھا کہ

ہے دل کے لیے موت مشینوں کی حکومت
احساسِ مروت کو کچل دیتے ہیں آلات

طلبہ کی کردار سازی، قائدانہ صلاحیتیں پروان چڑھانے اور مخفی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کے لیے تعلیم کے ساتھ مناسب اوقات میں کھیل کود ناگزیر ہے۔ عظیم فلسفی روسو کا کہنا ہے کہ اگر آپ صحت مند اذہان پیدا کرنا چاہتے ہیں تو طاقت پیدا کیجیے۔ قوم کو کھیل کے ذریعے لگاتار ورزش دیجیے۔ شاگردوں کو طاقت ور بنائیں۔ وہ جلد دانشور بن جائیں گے۔ طلبہ کے لیے کھیلوں کی اہمیت سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ کیوں کہ کھیل انسان کو ہر قسم کے حالات سے نبردآزما ہونے کے گُر سکھاتا ہے۔ کھیل لہو گرم رکھنے کا بہانہ ہے۔ حکماء فرماتے ہیں کہ ایک صحت مند جسم ہی میں ایک صحت مند دماغ ہوتا ہے۔ جب جسم لاغر ور مختلف بیماریوں کا گھر ہو گا تو بہترین ذہانت کا سوچنا بھی رائیگاں ہے. ماہرین تعلیم ابتدائی جماعتوں کے بچوں کے لیے کھیلوں کی تاکید کرتے ہیں.

چھوٹے بچے جلد ہی کتاب سے بوریت محسوس کرتے ہیں اور ان کی توجہ پڑھائی پر مرکوز رکھنا قدرے پیچیدہ عمل ہے مگر کھیل کے ذریعے اکتاہٹ دور کر کے پڑھائی کی جانب راغب کیا جا سکتا ہے۔ انھیں کھیل کھیل میں پڑھایا اور سکھایا جا سکتا ہے۔ پس کہا جا سکتا ہے کہ کھیل اور تعلیم لازم و ملزوم ہیں۔ یہ ایک دوسر ے سے ہرگز جُدا نہیں۔ لہٰذا تعلیمی اداروں میں وقتاً فوقتا ً مختلف کھیلوں کا انعقاد لازمی کیا جائے اور والدین گھروں می طلبہ کے لیے کھیلوں کا اہتمام کریں تاکہ طلبہ کو ایک صحتمندانہ ماحول میسر آئے اور انہیں اپنا ٹیلنٹ د کھانے کا موقع مل سکے۔

  

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں